Blog Single

Islamabad, March 7, 2017: Federal Minister for Planning, Development and Reform, Prof. Ahsan Iqbal has stated that CPEC would enlist Pakistan among top 25 economies of the world by 2025. He further said that US $50 billion dollar investment under the framework of China Pakistan Economic Corridor (CPEC) has integrated Pakistan’s economy with the world for the first time.

 He was briefing the Senate Forum for Policy Research (SFPR) at Pakistan Institute of Parliamentary Services (PIPS) under the chairmanship of Syed Nayer Hussain Bokhari on Tuesday.

Stressing the importance of Pakistan’s geographical location, he said that CPEC would physically and economically integrate Pakistan with China, Central Asian Republics and Eurasian region under the wider framework of One Belt One Road (OBOR) and Pakistan vision 2025. He noted that CPEC and One Built One Road would collectively transform and improve the lives of three billion people which rightly sets the context of this mega regional initiative as “Game Changer” in the region.  

Minister Prof. Ahsan Iqbal briefed the participants that CPEC framework includes Energy, Infrastructure, Gwadar and development of Industry Cooperation which would be completed in four phases; early harvest projects by 2017-18, short term by 2020, medium term by 2025 and long term by 2030. Stating the facts and mode of financing mechanism, he made it clear that complete transparency is being ensured in investment of CPEC. He reiterated that not even a single dollar of CPEC investment is being processed through Government of Pakistan’s accounts. Explaining the breakdown of Chinese investment under CPEC, he stated that the US$35 billion investment under Energy Portfolio is being done in Independent Power Producer’s (IPP) Mode which is being regulated by NEPRA. He further said that CPEC energy projects would generate 14-15000 megawatts of electricity which would help overcome the prevailing energy crisis. CPEC energy portfolio includes coal, hydel and renewable energy projects. Three hydel projects including Sukki Kinari, Karot and Kohala are under implementation.

He further noted that the process of selecting a construction company is done through a transparent process where China through National Development and Reform Commission (NDRC) proposes three names. Pakistan selects the cost effective and efficient company for the CPEC Projects. In the same manner, he apprised the participants that infrastructure sector projects are being financed through concessional loans on a meager low interest rate of 2 percent payable over 20-25 years.

 He briefed that work is in progress on KKH (Havelian to Thakot section) and Peshawar-Karachi motorway (Multan-Sukkur section). On western route, he said that it would be completed by 2018 while adding that work on different sections including Hakla-Burhan and Dera Ismail Khan Zhobe of western route is being done on high priority according to the decisions made in All Parties Conference held in 28 May 2015.

Minister Iqbal stated that the development of Gwadar deep sea port would usher in a new era of development in the province of Balochistan. He noted that Gwadar being a gateway of CPEC, link the West Asia, Central Asia, Russia and Eurasia to warm waters of Arabian Sea and onwards to Mediterranean region. He highlighted that Gwadar International Airport, Gwadar Expressway and 300 Megawatt electricity project has been planned for Gwadar alongside Water Treatment Plants and Rail networks, Schools, Gwadar University and state-of-the-art hospital for the local people of area.

He remarked that CPEC transport infrastructure projects would transform and facilitate connectivity across Pakistan. In this regard, he pertinently mentioned that the completion of missing link of western route from Quetta to Gwadar stretch about 650 km has reduced travel time to mere 8 hours which was otherwise a two day long journey.

Prof. Ahsan Iqbal further said that up-gradation of Mainline One ML-1 (Karachi-Peshawar-Landikotal Line) is being done whereas feasibility study for extension of railway line up till Gwadar and Quetta to Peshawar have been started. Up-gradation of ML-1 would cost US$8 billion and its completion would double the speed of railway from 80 to 160 km/h. 

Expressing hope for Industry Cooperation between China and Pakistan under CPEC framework, Minister said that this joint initiative would ensure suitability of this multi-billion project.  In this regard, he noted that nine Special Economic Zones (SEZs) have been agreed between China and Pakistan in the recently held Joint Cooperation Committee (JCC) meeting in Beijing. Accordingly, all provinces would be developing one Special Economic Zone each whereas Federal Government would be developing SEZ in Islamabad and on federal land of Pakistan Steel Mill in Karachi. Provincial and Federal Governments are working together for developing their respective SEZs. Minister further briefed the participant about the project of digital connectivity which includes the laying of Optic Fiber from Khunjerab to Gilgit Baltistan, parts of Khyber Pakhtunkhwa and onwards to Islamabad. He noted that optic fiber project would enhance IT related opportunities in relatively backward areas of GB and parts of KP province.

Prof. Ahsan Iqbal expressed hope that CPEC would bring in eight major benefits. He keenly noted that US$ 50 billion would boost GDP growth rate by 6-8 percent, ensure energy security besides overcoming prevailing energy crisis, bolster Pakistan’s industrial capacity and link Pakistan’s rural and remote areas with urban centers. He further said that CPEC would strengthen Pakistan domestically, bring in prosperity, enabling transfer of knowledge and technology as well as would elevate Pakistan’s regional status.

Answering the questions raised by participants, he said that the dualization of Indus Highway (Kohat to Lakki Marwat) has been started and funds have been released from Federal PSDP. Similarly, he informed the participants that work would be initiated on Kohat-Pindi Gaip link road from western route soon. He further stated that two major road arteries from Kabul to Quetta and Herat to Turkmenistan are being planned under CAREC framework.

Minister Ahsan Iqbal further highlighted that CPEC projects also aim at ensuring Human Resource Development and Training Programs including National Transport Policy, and Consortium of Pakistan’s top five business schools. Replying to a question on Balochistan, he stated that road networks are being laid out across the province especially Gwadar. Similarly, Gwadar University is being built and 2 Million Gallon/Day Reverse Osmosis plant is being made functional again. In addition, a 5MGDs new desalination is in progress under CPEC.

Prof. Ahsan Iqbal also stated that Pakistan has sufficient coal resources to last 400 years and is therefore capable of producing 5000 megawatts of electricity annually. He stressed that Super Critical Technology is being used which would not lead to environmental pollution. He further stated that each CPEC project passes through Environmental Impact Assessment (EIA) prior to approval.

Participants of SFPR included Senator Mushahid Hussain Syed, Senator Saood Majeed, Wasim Sajjad, Senator (R) Afrasiyab Khattak, Muhammad Anwar Bhinder, Senator (R) Javed Jabbar, Rukhsana Zuberi, Haroon Akhtar Khan and Razeena Alam Khan.

وفاقی وزیر منصوبہ بندی ترقی و اصلاحات  احسن اقبال نے کہا  ہے کہ پاک چین اقتصادی راہداری کی 50 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری سے پاکستان پہلی دفعہ تجارتی اور اقتصادی طور پر دنیا کے ساتھ منسلک ہو رہا ہے ۔ وسطی ایشاء  وچین کے سنگم پر واقع ہونے سے علاقائی تعاون اورتجارت میں بے پناہ اضافہ ہوگا۔ 2025 تک پاکستان کو دنیا کے 25 پہلے معاشی  طور پرمضبوط ممالک میں شامل کرانا ہمارے اہداف میں شامل ہیں  ۔ ون بیلٹ ون روڈ  اورویژن  2025کے تحت پاک چین  کا یکجاہونا اہمیت اختیار کر گیا ہے ۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے  سینٹ فورم فار پالیسی ریسرچ کے چیئرمین سید نیئر حسین بخاری کی صدارت میں منگل کو ادارہ برائے پارلیمانی خدمات میں منعقد ہونے والے اجلاس میں بریفنگ دیتے ہوئے کیا، وفاقی وزیر کا کہنا تھا  کہ پاک چین اقتصادی راہداری کی کُل سرمایہ کاری میں سے ایک ڈالر بھی حکومت پاکستان کی دسترس سے نہیں گزر رہا ۔ سی پیک کے تحت 75فیصد سرمایہ کاری نجی شعبے کے ذریعے  توانائی کے شعبے  میں ہورہی ہے جبکہ شاہراہوں اور دیگر منصوبوں کی تکمیل آسان شرائط پر حاصل کئے جانیوالے قرضوں کی زریعے ہورہی  ہیں جس کی2 فیصد شرح سود پر 20 سے25 سالوں میں واپسی ہوگی ۔

وفاقی وزیر احسن اقبال کا کہنا تھا کہ سی پیک  نہایت شفاف پروگرام ہے، توانائی کے شعبے میں تمام تر سرمایہ کاری نجی شعبہ کررہا ہے جس کا ٹیرف اور دیگر معاملات  نیپرا دیکھ رہا ہے ، جبکہ انفراسٹرکچر کے منصوبوں کیلئے چین کا ادارہ این ڈی آر سی تین کمپنیوں کا پینل تجویز کرتا ہے جس میں  کم بولی والی اور مستعد کمپنی کو ٹھیکے دیئے جاتے ہیں۔ وفاقی وزیر نے بتایا کہ سی پیک میں 2014 سے2030 تک قلیل ، درمیانے اور طویل مدت منصوبے  شامل ہیں جسکی تکمیل سے پاکستان میں معاشی انقلاب آئے گا جو پورے خطے کیلئے گیم چینجر ثابت ہوگا۔سی پیک منصوبوں کے حوالے سے تفصیلات بتاتے ہوئے احسن اقبال کا کہنا تھا کہ گوادر بندرگاہ پاک چین اقتصادی راہداری کا گیٹ وے ہے۔ جہاں 3ائر پورٹ، سو میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کے پلانٹ کے علاوہ واٹر ٹریٹمنٹ پلانٹ اور مقامی آبادی کے معیار زندگی کو بلند کرنے کیلئے ہسپتال کا منصوبہ زیر تکمیل ہے ۔ پاکستان میں توانائی کے شعبے میں جاری کوئلے ، ہائیڈل ، سولر اور دیگرمنصوبوں سے14 سے15 ہزار میگاواٹ بجلی پید ا ہوگی، ان منصوبوں میں سُکی کناری ، کروٹ  اور کوہالہ کے پن بجلی منصوبے بھی شامل ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ توانائی کے شعبے میں گردشی قرضوں کی شرح کم کرنے کیلئے  تیل پر انحصار کم کیا جارہا ہے اور  کوئلے سمیت مقامی وسائل  کوزیادہ سے زیادہ برؤے کار لایا جارہا ہے۔

وفاقی وزیر نے مزید کہا کہ  شاہراؤں اور ریلوے منصوبوں  پرحکومت پاکستان اپنے وسائل اور چینی سرمایہ کاری کے ذریعے  کام کررہا ہے حویلیاں سے تھاکوٹ شاہراہ  اور پشاور تا کراچی  موٹر وے کے ملتان سے سکھر سیکشن پر کام  جاری ہے ۔ گوادر سے کوئٹہ لنک روڈ  کی عدم تعمیر کی وجہ سے مغربی روٹ نامکمل اور ادھورا تھا۔ 650کلومیٹرگوادر تا کوئٹہ  شاہراہ کے علاوہ  گوادر سے خضدار ، رتوڈیرو  پرترجیحی بنیادوں پر ایف ڈبلیو او کو متحرک کیا گیا ۔ گوادر کوئٹہ  شاہراہ کی تعمیر سے ان شہروں کے درمیان  دو دن کا سفر آٹھ گھنٹے میں طے ہوجاتا ہے۔ جون تک گوادر ، خضدار ، رتوڈیرو  سیکشن کی تکمیل سے سندھ اور بلوچستان ایک دوسرے کیساتھ منسلک ہوجائیں گے انہوں نے مزید کہا کہ کہ  وزیر اعظم کی آل پارٹیز کانفرنس میں وعدے کے تحت  مغربی روٹ کے ڈیرہ اسماعیل خان سے برھان موٹروے کی تعمیر تیز رفتار ی کیساتھ جاری ہے  جو2018تک مکمل ہوجائے گی۔

احسن اقبال نے مزید کہا کہ ریلوے نظام کو اپ گریڈ کرنے کے لیے ایم ایل ون کراچی سے لنڈی کوتل منصوبے پر کام  جاری ہے جبکہ مزید اسے گوادر تک وسعت دینے کیلئے اور کوئٹہ پشاور کے درمیان رابطہ بحال کرنے کے لیے فزیبلٹی اسٹڈی شروع کردی گئی ہے۔ایم ایل ون 8ارب ڈالر کا منصوبہ ہے جس کی تکمیل سے ریل کی رفتار 80سے 160کلومیٹر ہوجائے گی۔انہوں نے مزید کہا کہ  چین میں منعقد ہونے والے چھٹے جے سی سی اجلاس میں 9انڈسٹریل زونز پر اتفاق ہوگیا ہے۔ ہر صوبے  اور  ہر ریجن میں ایک  ایک جبکہ وفاق کی جانب سے اسلام آباد اور پورٹ قاسم  کراچی میں سٹیل مل کی اراضی پر اقتصادی زونز کے قیام کا فیصلہ ہوچکا ہے ، اس منصوبے کو صوبائی حکومتوں کے زریعے عملی جامہ پہنانے کی کوشش جاری  ہے۔ فائبر آیپٹک کیبل خنجراب سے راولپنڈی تک بچھائی جائے گی۔ جو گلگت بلتستان اور خیبر پختونخوا کے ذریعے اسلام آباد تک پہنچے گی، جس کی وجہ سے گلگت بلتستان اور شمالی خیبر پختونخوا میں سافٹ وئیر ہاوسز اور آئی ٹی کے شعبے میں مختلف منصوبے شروع  کرنے کے مواقع میسر آجائیں گے۔

وفاقی وزیر احسن اقبال نے اس امید کا اظہار کیا کہ پاک چین اقتصادی راہداری کے 8بڑے فوائد حاصل ہوں گے۔ 50ارب ڈالر کی مجموعی سرمایہ کاری سے جی ڈی پی کو 6سے8فیصد تک لے جانے میں مدد ملے گی۔ 35ارب ڈالر  کی سرمایہ کاری   کی بدولت پاکستان میں  توانائی بحران پر قابو پانے میں مدد ملے گی، جدید ٹرانسپورٹ انفراسٹرکچر کی وجہ سے سرمایہ کار ی کے لیے مواقع  پیدا ہوں گے، نئی صنعتوں کے قیام کے عمل کو آگے بڑھانے میں مدد ملے گی ، اندرونی طور پر پسماندہ علاقہ جات کو ترقی یافتہ علاقوں سے جوڑ دیا جائے گا  یہ منصوبہ ملکی استحکام  کا باعث ہوگا جو معاشی ترقی و خوشحالی کا ضامن ہوگا، سی پیک کے تحت  پاک چین تعاون کی وجہ سے ٹیکنالوجی و علم کے منتقلی کے مواقع میسر آئیں گے جبکہ  پاکستان علاقائی تعاون ،روابط  اور تجارت کے نئے مرکز کے طور پر ابھر کر سامنے آئے گا۔

سوالات کے جوابات دیتے ہوئے وفاقی وزیر نے کہا کہ کوہاٹ  تا لکی مروت  ا نڈس ہائی وےکا منصوبہ منظور ہوگیا ہے اس شاہراہ کی بحالی و دوریہ کرنے کیلئے  فنڈز جاری کردیئے گئے ہیں ۔ کوہاٹ سے جھنڈ و پنڈی گھیپ مغربی روٹ لنک روڈ کی تعمیر کا منصوبہ بھی جلد عملی شکل اختیار کرے گا،انہوں نے مزید بتایا کہ کیرک کے تحت  کابل سے کوئٹہ اورہرات سے ترکمنستان  شاہراہوں کے دومنصوبے  زیر غور ہیں ۔

وفاقی وزیر نے مزید بتایا کہ سی پیک کے  انسانی ترقی اور تربیت کے لیے پروگرام شروع ہیں ۔ پہلی بار ٹرانسپورٹ پالیسی بنائی جارہی ہے۔ 5بزنس سکولوں کا کنسورشیم بنایا گیا ہے۔ پاکستان میں براہ راست بین الاقوامی سرمایہ کاری کے لیے پاک چین اقتصادی راہداری پلیٹ فارم کا کام کررہی ہے۔ بلوچستان  کے حوالے سے پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے بتایا کہ یہاں  سڑکوں کا جال بچھایا جارہا ہے۔ گوادر یونیورسٹی قائم کردی گئی ہے۔ 2ملین گیلن پانی روزانہ فراہم کرنے والا پلانٹ گرمیوں سے پہلے دوبارہ چالو ہوجائے گا جبکہ 5ملین گیلن پانی کے نئے منصوبے کا اشتہار دیا گیا ہے۔

وفاقی وزیر نے مزید کہا کہ 4سوسال کے کوئلے کے وسیع ذخائر سے بجلی بنانے کیلئے محفوظ ترین سپر کرٹیکل ٹیکنالوجی استعمال کی جارہی ہے۔ جس کی وجہ سے ماحولیاتی آلودگی کا مسئلہ نہیں رہے گا، انہوں نے مزید کہا کہ ہر منصوبے کا ماحولیاتی جائزہ لیا جاتا ہے جس کے بعدہی منصوبے منظور کئے جاتے ہیں ، اجلاس میں سینیٹر زمشاہد حسین سید ، سعود مجید ،وسیم سجاد افراسیاب خٹک ،محمد انور بھنڈر ، جاوید جبا ر ، رخسانہ زبیری ، ہارون اختر خان  اوررزینہ عالم خان شرکت کی

Most Recent News: